آئی ایم ایف کے قرض پروگرام میں تاخیر سے بجٹ سازی کاعمل متاثر ہونےکا خدشہ

پاکستان اور  عالمی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے درمیان قرض پروگرام تاحال تاخیرکا شکار ہے جس کے باعث بجٹ سازی کا عمل متاثر ہونےکا خدشہ ہے۔

ذرائع کے مطابق  آئی ایم ایف بورڈ کے اجلاسوں کا شیڈول جاری کردیا گیا ہے تاہم  آئی ایم ایف کے17 مئی تک اجلاس میں پاکستان کا معاملہ ایجنڈے میں شامل نہیں ہے۔

ذرائع کا کہنا ہےکہ اسٹاف لیول معاہدہ نہ ہونے پر عالمی مالیاتی اداروں سے فنڈنگ بھی نہیں ہوگی اور آئی ایم ایف سے معاملات طے نہ ہونے پربجٹ سازی کا عمل متاثرہونےکا بھی خدشہ ہے۔

ذرائع نے بتایا ہےکہ آئی ایم ایف دوست ملکوں کی فنڈنگ کی یقین دہانی پربھی مطمئن نہ ہوا، جس کے بعد پاکستان نے مزید ایک ارب ڈالر کی فنانسنگ کا پروگرام دیا۔

ذرائع وزارت خزانہ کا کہنا ہےکہ پاکستان نے آئی ایم ایف سے نویں جائزے کے لیے بیشتر شرائط پوری کیں، پاکستان نے نویں جائزے پراسٹاف لیول معاہدے کی خاطر 170 ارب روپے ٹیکس منی بجٹ کے ذریعے لگائے۔

پاکستان اور  آئی ایم ایف کے درمیان اسٹاف لیول معاہدہ 9 فروری کو ہونا تھا جو تاخیرکا شکار ہے۔

یہ بھی دیکھیں:

یہ بھی چیک کریں

نگران حکومت کے عوام کو جھٹکے، بجلی مزید مہنگی کرنے کی تیاری

لاہور: مہنگائی کی چکی میں پسے عوام پر ایک اور بجلی بم گرانے کی تیاری …