آئی ایم ایف کا دواؤں اور پیٹرولیم مصنوعات سمیت متعدد اشیاء پر 18 فیصد جی ایس ٹی نافذ کرنیکا مطالبہ

اسلام آباد: عالمی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) نے حکومت پاکستان سے مطالبہ کیا ہےکہ خوراک، دواؤں، پیٹرولیم مصنوعات اور اسٹیشنری سمیت متعدد اشیاء پر 18فیصد جی ایس ٹی نافذ کریں۔

تفصیلات کے مطابق بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) نے ایف بی آر کو کئی درجن اشیاء کو جنرل سیلز ٹیکس کی 18 فیصد کی معیاری شرح میں لانے کی سفارش کی ہے جن میں غیر پروسیس شدہ خوراک، اسٹیشنری اشیاء، ادویات، پی او ایل مصنوعات اور دیگر شامل ہیں۔

آئی ایم ایف نے اندازہ لگایا کہ جی ایس ٹی کی شرحوں کو معقول بنانے سے مجموعی ملکی پیداوار (جی ڈی پی) کا 1.3 فیصد محصول حاصل ہو سکتا ہے جو قومی خزانے میں 1300ارب روپے کے برابر ہے۔

تاہم آئی ایم ایف نے اپنا اندازہ نہیں لگایا کہ اگر بالواسطہ ٹیکس میں اضافے کے ذریعے جی ایس ٹی کا اتنا سخت اقدام نافذ کیا گیا تو آنے والے مہینوں اور سالوں میں اس سے مہنگائی سے متاثرہ عوام کو کتنا نقصان پہنچے گا۔

آئی ایم ایف کی سفارشات میں پانچویں شیڈول کو ختم کرنے، چھٹے شیڈول کی چھوٹ ختم کرنے اور سیلز ٹیکس کے آٹھویں شیڈول کے تحت ٹیکس کی کم کردہ شرح کو ختم کرنے پر روشنی ڈالی گئی۔

آئی ایم ایف نے پانچویں شیڈول کے تحت برآمدی اشیا کے علاوہ تمام زیرو ریٹنگ ختم کرنے، چھٹے شیڈول کے تحت صرف رہائشی املاک (پہلی فروخت کے علاوہ) کی فراہمی تک چھوٹ کو محدود کرنے اور دیگر تمام اشیا کو جی ایس ٹی کی معیاری شرح پر لانے کا مطالبہ کیا ہے۔

ذرائع نے آئی ایم ایف کی رپورٹ کے حوالے سے بتایا کہ یہ خطے اور ابھرتی ہوئی معیشتوں میں موازنہ کرنے والوں کی اوسط کے مطابق ایندھن پر بھی ٹیکس لگائے گا۔

آئی ایم ایف نے آٹھویں شیڈول کے تحت کم کردہ شرحوں کو ہٹانے اور تمام اشیا کو معیاری جی ایس ٹی کی شرح پر لانے کا بھی مطالبہ کیا ہے، سوائے ضروری اشیاء کے جیسے کہ کھانے پینے کی اشیاء، اور ضروری تعلیم اور صحت کی اشیا، جن پر 10 فیصد کی واحد کمی کی شرح سے ٹیکس عائد کیا جائے گا۔

مجموعی طور پر آئی ایم ایف نے تعمیل سے متعلق تمام تحریف آمیز ٹیکس پالیسی تبدیلیوں کو ہٹانے کو مطالبہ کیا ہے جس میں کم از کم ٹیکسوں اور اضافی ٹیکسوں کو ختم کرنے کے ساتھ ساتھ نویں اور دسویں شیڈول کو ختم کرنا شامل ہے۔

جی ایس ٹی کو مربوط بنانے پر برآمدات کے علاوہ پانچویں شیڈول کے تحت تمام زیرو ریٹنگز کو ختم کرنے، دیگر تمام اشیاء کو جی ایس ٹی کی معیاری شرح پر لانے کی سفارش کی ہے جو اس وقت 18 فیصد ہے۔

پانچویں شیڈول کے تحت زیرو ریٹنگ سفارت کاروں، سفارتی مشنوں، مراعات یافتہ افراد اور مراعات یافتہ اداروں کو فراہم کرنے کے لیے دستیاب ہے جو کہ مختلف ایکٹ، آرڈرز، رولز، ریگولیشنز اور معاہدوں کے تحت آتے ہیں جو پارلیمنٹ کے ذریعے منظور کیے جاتے ہیں یا حکومت پاکستان کے ذریعے جاری کیے جاتے ہیں وغیرہ۔

ڈیوٹی اینڈ ٹیکس ریمیشن رولز 2001 کے تحت برآمد کنندگان کو فراہم کی جانے والی سپلائی اس میں بتائی گئی طریقہ کار، پابندیوں اور شرائط کی پابندی سے مشروط ہے۔پاکستان کسٹمز ٹیرف کے 87.02 کے تحت آنے والی گاڑیوں کو چھوڑ کر گوادر اسپیشل اکنامک زون کو کی جانے والی درآمدات یا سپلائیز، 765[بورڈ] جیسی شرائط، حدود اور پابندیوں کے ساتھ مشروط ہیں۔

غیر ملکی سرمایہ کاری (پروموشن اینڈ پروٹیکشن) ایکٹ 2022 کے پہلے شیڈول کے سیریل نمبر  1 میں بیان کردہ کسی اہل سرمایہ کاری کے لیے یا اس کے ذریعے کی جانے والی درآمدات یا فراہمی کو اس مدت کے لیے عائد کر سکتا ہے جیسا کہ مذکورہ ایکٹ کے دوسرے شیڈول میں بیان کیا گیا ہے۔

گوادر فری زون میں سامان کی مزید تیاری اور اس کی برآمد کے لیے خام مال، اجزاء اور سامان کی سپلائی، بشرطیکہ پاکستان کے ٹیرف ایریا میں سپلائی کی صورت میں، گوادر فری زون میں مینوفیکچررز کو درآمد کرنے، مقامی طور پر تیار کردہ پلانٹ اور مندرجہ ذیل تصریحات کی مشینری کی سپلائی کے لیے گڈز ڈیکلریشن پر لگائی گئی قیمت پر ٹیکس وصول کیا جائے گا۔ اگر مشینری کو گوادر فری زون سے باہر پاکستان کے ٹیرف ایریا میں لایا جاتا ہے، تو درآمد کے لیے گڈز ڈیکلریشن پر لگائی گئی قیمت پر سیلز ٹیکس وصول کیا جائے گا۔

آئی ایم ایف نے چھٹے شیڈول کے تحت چھوٹ کو صرف رہائشی املاک کی فراہمی تک محدود کرنے کی سفارش کی ہے (پہلی فروخت کے علاوہ) اور دیگر تمام سامان کو جی ایس ٹی کی معیاری شرح پر لایا جائے۔

چھٹے شیڈول میں خوردنی سبزیاں (افغانستان سے درآمد شدہ)، سیب کے علاوہ افغانستان سے درآمد شدہ دالیں، پھل، مرچ، ادرک، ہلدی، چاول، گندم، گندم اور مسن کا آٹا، قرآن پاک، مکمل یا حصوں میں، ترجمہ کے ساتھ یا بغیر؛ کسی بھی اینالاگ یا ڈیجیٹل میڈیا پر ریکارڈ شدہ قرآنی آیات؛ دیگر مقدس کتابیں، نیوز پرنٹ اور کتابیں لیکن بروشرز، کتابچے اور ڈائریکٹریز کو چھوڑ کر، کرنسی نوٹ، بینک نوٹ، شیئرز، اسٹاک اور بانڈز، مانیٹری سونا، انفیوژن سلوشن کے لیے خالی غیر زہریلے بیگ، ڈیکسٹروز اور نمکین انفیوژن دینے والے سیٹ، جسم کے مصنوعی حصے، انٹرا آکولر لینز اور گلوکوز ٹیسٹنگ کا سامان، گھریلو اشیاء کی درآمد اور ذاتی اثرات بشمول گاڑیاں اور پاکستان میں قائم منصوبوں کے لیے عطیہ کے لیے سامان بھی جو خلیجی حکمرانوں میں سے کسی کی جانب سے درآمد کیا جاتا ہے وغیرہ شامل ہیں۔

ایس ٹی کے آٹھویں شیڈول میں اشیاء میں قدرتی گیس، فاسفورک ایسڈ اگر کھاد کے ذریعے درآمد کیا گیا اور بہت سی دوسری چیزیں شامل ہیں۔

یہ ویڈیوز بھی دیکھیں:

یہ بھی چیک کریں

سعودی گروپ کی سرمایہ کاری، شیل پاکستان کے 77.42 فیصد شیئرز خرید لیے

سعودی گروپ ایساد ہولڈنگ نے متحدہ عرب امارات میں قائم وافی انرجی ہولڈنگ لمیٹڈ کے …