امریکا نے پاکستان کو صرف اپنے مطلب کیلئے استعمال کیا: وزیراعظم

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان نے کہا ہےکہ امریکا نے پاکستان کو ہمیشہ اپنے مطلب کے لیے استعمال کیا اور جب جہاں امریکا کو ہماری ضرورت پڑی تو امریکا نے تعلقات استوار کیے اور پھر ضرورت پوری ہونے پر چھوڑ دیا۔

ایک انٹرویو میں وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ کھیل سے منسلک رہنے کے بجائے میں نے چیلنجنگ شعبے کا انتخاب کیا، چیلنج کو قبول نہ کرنا کمزور کی نشاندہی ہے، کھیل کا میدان چھوڑنے کے بعد میں نے سب سے پہلے کینسر اسپتال بنایا،  عطیات کی مدد سے دو کینسر اسپتال بنائے، کمزورطبقے کے لیے عطیات کی مدد سے دو جامعات تعمیر کی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ میں نے 21 سال تک کرکٹ کھیلی اور سیاست میں آنے کا فیصلہ ملک کو کرپٹ حکمرانوں سے نجات دلانے کیلئے کیا، 22 سال جدوجہد کے بعد وزارت عظمیٰ کے عہدہ پر فائز ہوا۔

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ میرا یقین ہے کہ ملک کرپشن کی وجہ سے غریب ہوتے ہیں اور جو ملک طاقتور کو قانون کے کٹہرے میں نہ لائے وہ تباہ ہوجاتا ہے، میری پارٹی کا منشور ملک میں قانون کی حکمرانی اور فلاحی ریاست کا قیام ہے ۔

انہوں نے مزید کہا کہ جب حکومت بنائی تو ہماری ترجیح بھارت کے ساتھ تعلقات میں بہتری تھی۔

افغانستان سے متعلق وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ افغانستان کی تاریخ جانتا ہوں، ہمیشہ کہا افغان مسئلے کا فوجی حل نہیں کیونکہ افغانستان کے عوام غیر ملکی حکمران قبول نہیں کرتے، میں پہلے دن سے افغانستان کے فوجی حل کا مخالف تھا جب کہ امریکیوں نے افغانستان کی تاریخ پڑھی ہی نہیں، جوافغانوں کی تاریخ سے واقف ہیں وہ یہ اقدام کبھی نہ کرتے جو امریکہ نے کیا۔

انہوں نے کہا کہ اسامہ بن لادن کے مارے جانے کے بعد امریکا کا مشن ختم ہوجانا چاہیے تھا، اگر مقاصد واضح نہ ہوں تو ناکامی ہوتی ہے اور  امریکا کے افغانستان میں مقاصد واضح نہیں تھے، اس کا افغانستان میں مشن جھوٹی بنیاد پر اور بے مقصد تھا جب کہ افغان مسئلہ یہ ہے کہ امریکا طالبان حکومت اور عوام میں فرق نہیں کرپارہا، 40 سال بعد آج افغانستان میں کوئی تنازع نہیں، آج افغانستان میں کوئی خانہ جنگی نہیں۔

وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ طالبان حکومت پر پابندیاں لگانے سے نقصان افغان عوام کا ہورہا ہے، افغانستان کو سنگین بحران کا سامنا ہے اور پابندیوں کی وجہ سے ملک شدید افراتفری کا شکار ہے،  اس کی معیشت کا 70 فیصد انحصار غیر ملکی امداد پر ہے اس لیے غیرملکی امداد بند ہونے سے انسانی تاریخ کا بڑا سانحہ ہوسکتا ہے۔

پاک امریکا تعلقات پر وزیراعظم نے کہا کہ ایسا بھی وقت تھا جب پاکستان کے امریکا سے دوستانہ تعلقات تھے اور  جب پاکستان کی ضرورت نہ رہی تو امریکا نے پاکستان سےدوری اختیارکرلی، بعد میں امریکا اور پاکستان کے دوستانہ تعلقات بحال ہوگئے، سابق سوویت یونین کےخلاف جنگ میں پاکستان امریکا کا دوست بن گیا اور امریکا نے اس وقت ہماری مدد کی لیکن سوویت یونین کے افغانستان سے جاتے ہی امریکا نے پاکستان پر پابندیاں لگادیں۔

ان کا کہنا تھا کہ 10 سال بعد نائن الیون ہوا تو امریکا پاکستان کے تعلقات پھر سے اچھے ہوگئے، جب افغانستان میں امریکا ناکام ہوا تو شکست کاذمہ دار پاکستان کو ٹھہرایا گیا۔

وزیراعظم نے کہا کہ امریکا سے پاکستان کے ویسے تعلقات نہیں رہے جیسے چین کے ساتھ ہیں، چین پاکستان کا ہر آزمائش پر اترنے والا دوست ملک ہے اور 70 برس سے پاکستان اور چین کے تعلقات میں تسلسل چلا آرہاہے، پاکستان ہر فورم پر چین کےساتھ رہاہے اور ہر ضرورت پرچین نے پاکستان کا ساتھ دیاہے۔

یہ بھی چیک کریں

آزاد کشمیر میں نام نہاد دہشتگردوں کے کیمپوں کا بھارتی دعویٰ بے بنیاد ہے: پاک فوج

راولپنڈی:پاک فوج کا کہنا ہے کہ بھارتی فوج کے اعلیٰ افسر کا آزاد جموں و …